مسلمانوں پر ظلم و تشدد اور جے۔این۔یو۔ میں غنڈہ گردی کے خلاف جامعہ ملیہ میں مظاہرہ

دیش میں بن رہے نفرت کے ماحول اور مسلمانوں پر ہو رہے ظلم و تشدد کے خلاف آج جامعہ ملیہ اسلامیہ میں میں مختلف طلبہ تنظیموں کی جانب سے ایک متحدہ مارچ نکالا گیا۔ يہ مارچ ہسٹری لان سے گیٹ نمبر 8 تک رکھا گیا تھا۔

تقریباً 50 طلبہ پر مشتمل اس مارچ میں میں ملک میں بڑھتے تشدد کے واقعات کی پرزور مذمت کی گئی۔ اور سرکار اور انتظامیہ کے خلاف اپنے غم و غصے کا اظہار کیا گیا۔ احتجاج میں دیش میں بڑھ رہی لاقانونیت ،نفرت، اور مسلم اقلیتوں کے خلاف تشدد اور مسلمانوں پر ہورہے جانی اور مالی حملوں کی پرزور مذمت کرنے کے ساتھ ہی بیتے دنوں جے این یو میں برسراقتدار سیاسی پارٹی کی طلبا تنظیم اے بی وی پی کی غنڈہ گردی کے خلاف بھی احتجاج درج کرایا گیا۔

واضح رہے کہ رام نومی کے جلوس کے بہانے ہندوستان کے مختلف علاقوں اور ریاستوں میں مسلم آبادیوں کو اور مسلم عوام کو ہندو تنظیموں کی جانب سے نشانہ بنایا جا رہا ہے ہے۔ ساتھ ہی مسلمانوں کی عبادت گاہوں پر بھگوا جھنڈا لگانے اور ان کو مسمار کرنے کی کوششیں ہو رہی ہیں ہیں۔

اس احتجاج میں طلبہ تنظیم DISSC، CFI، AIRSO، AISA اور SIO کے علاوہ دیگر طلباء نمائندے موجود تھے۔ اسٹوڈنٹس اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا (ایس آئی او) جامعہ ملیہ اسلامیہ کے صدر مصدق مبین نے مارچ کی غرض و غایت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا، "ملک میں بڑھ رہی نفرت کی فضا اور مسلمانوں پر ہورہے ظلم کے پے درپے واقعات ہمارے یہاں کے قانون، عدلیہ اور انتظامیہ پر سوالیہ نشان لگا رہے ہیں۔ پورے ملک میں لاقانونیت کی فضا بنی ہوئی ہے۔ اور مسلمانوں کو طرح طرح سے پریشان کیا جا رہا ہے۔ ہم سب کے لئے یہ حالات تشویش ناک ہے ۔ ہم سرکار سے مانگ کرتے ہیں کہ وہ مسلمانوں کی جان و مال کی حفاظت کو یقینی بنائے۔ اور ملک میں اس طرح انتشار پھیلانے والے اور قانون ہاتھ میں لینے والوں سے سختی سے نبٹا جائے۔ نفرتی تقاریر پر قدغن لگائی جائے۔ اور اور ایسا کرنے والے مجرموں کو جیل کی سلاخوں کے پیچھے بھیجا جائے۔”


مصعب قاضی
نیشنل سیکرٹری
اسٹوڈنٹس اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا