جمعہ الوداع کی نماز مسجد میں اور عیدین کی نماز عیدگاہ میں ادا کی جائے

آج جمعہ الوداع ھے ، ھمارے ملک میں جمعہ الوداع کا بڑا اھتمام کیا جاتا ھے ، جمعہ الوداع کے موقع پر مساجد میں بڑی بھیڑ ھوتی ھے ، اسی طرح عید ین کے موقع پر عیدین کی نماز میں بھی بہت بھیڑ ھو تی ھے ، نماز میں جوان ،بوڑھے اور بچے بھی شریک ھوتے ہیں ، خصوصا عیدین کا موقع تو خوشی کا ھوتا ھے ،اس موقع پر چھوٹے چھوٹے بچے مسجد یا عیدگاہ چلے آتے ہیں ،ایسے موقع پر اطمینان و سکون اور امن و شانتی کو خاص اھمیت حاصل ہوتی ھے ، ان نمازوں کے موقع پر عید گاہ اور اکثر مسجد میں جگہ کم ھو جاتی ھے ، مسجد اور عیدگاہ میں جگہ کم ھونے کی وجہ سے پہلے لوگ مسجد یا عید گاہ سے باہر بھی جمعہ اور عیدین کی نماز ادا کرلیا کرتے تھے ، مگر اب بہت سے صوبوں میں مسجد کے باہر یا کھلی جگہ پر نماز پڑھنے میں اعتراض جتایا جارہا ھے ، یہی نہیں ،بلکہ ٹکراؤ کی صورت پیدا ھو رہی ھے ، ایسی صورت میں ضرورت اس بات کی ھے کہ ھم ٹکراؤ سے بچیں اور متبادل صورتوں پر غور کریں ، اس کی شکل یہ ھے کہ جہاں مساجد یا عیدگاہ میں جگہ کم ھو اور ضرورت محسوس کی جائے ،اور ایک جماعت سے کام نہ چلے ،تو حسب ضرورت دو جماعت یا تین جماعت کرلی جائے ، تاکہ نماز میں کوئی دشواری پیش نہ آئے ، کسی کو اعتراض کا موقع ہاتھ نہ آئے ، اور امن و سکون کی فضا میں جمعہ الوداع اور عیدین کی نماز ادا ھوسکے ، اللہ تعالی شر اور فتنہ سے حفاظت فرمائے۔

ابوالکلام قاسمی شمسی