ہماری عید بھی مثالی اور ہمارا تہوار بھی مثالی


ہمارا مذھب اسلام ھے ،یہ امن و شانتی کا مذھب ھے ، اس میں خوشی کے اصول بھی مقرر ہیں اور غم کے ضابطے بھی متعین ہیں ، عید اور تہوار منانے کے اصول اور ضابطے بھی مقرر ہیں
مورخہ 3/ مئی عید کا دن تھا ، شام ھوتے ہی ہر طرف خوشی اور مسرت کی فضا قائم ہوگئی ، عید مبارک عید مبارک کے میسیج آنے لگے ، فون اور موبائل کی گھنٹیاں بجنے لگیں ، رات بھر خوشیوں کی بارش ھوتی رہی ، صبح ھوئی ، عید کی نماز کی تیاری شروع ہوگئی ، کچھ سیوئی اور لچھے کھائے ، بوڑھے ،بچے اور جوان سب نماز کے لئے روانہ ھوگئے ،کوئی مسجد جارہا ھے ،تو کوئی عیدگاہ ، نہ کوئی شور ھے نہ ہنگامہ ، سبھی وقار اور سنجیدگی کے ساتھ مسجد اور عیدگاہ کی طرف جارہے ہیں ، عمدہ لباس ، سر پر ٹوپی , زبان پر اللہ اکبر اللہ اکبر لا الہ الااللہ جاری ، نہایت ہی حسین اور خوبصورت منظر ، دیکھتے دیکھتے مسجد بھر گئی ،عیدگاہ بھر گئی ، سب صفوں میں با ادب باوقار بیٹھ گئے ، نماز شروع ھوئی ، اور ختم ھوئی ، نماز کے بعد سبہوں نے خوشی اور میل و محبت کا اظہار کیا ، مصافحہ کیا ، گلے ملے ، پھر تکبیر کہتے گھر لوٹ گئے ، راستہ میں نہ کوئی شور اور نہ کوئی آواز ، زبان پر اللہ اکبر اللہ اکبر کا ورد ، کتنا سہانا اور حسین منظر نظر آیا ،
لوگ مسجد یا عید گاہ گئے ، جاتے وقت برادران وطن نے استقبال کیا ، پھول برسائے ، عید کی نماز پڑھ کر لوٹے ، تب بھی وہ راستہ میں کھڑے اپنے مسلم بھائیوں سے گلے ملے ، پھول برسائے ،یہی ھے قومی یکجہتی اور گنگا جمنی تہذیب ، جو اس ملک کو ورثہ میں ملا ھے ،جس کو صوفی اور سنتوں نے پروان چڑھایا ھے ،
ھمارا ملک بھارت مختلف مذاہب کا گلدستہ ہے ،اس میں ہندو ،مسلم ، سکھ ،عیسائی اور دیگر مذاہب کے لوگ بستے ہیں ،ہزاروں سال سے پیار محبت اور آپسی میل جول سے رھتے آئے ہیں ،ہر ایک کے مذہبی رسم و رواج ہیں ،ازادی سے اپنے مذہب پر عمل کرتے رہے ہیں ، اور ایک دوسرے کے تہوار کے موقع پر قومی یکجہتی کا مظاہرہ کرتے آئے ہیں ، اس مرتبہ پھر سبہوں نے نفرت کی دیوار کو منہدم کردیا ، اور کثرت میں وحدت کو پیش کر کے سبہوں نے دنیا کو پیار و محبت کا پیغام دیا ھے ، ہمیں چاہئے کہ برادران وطن سے آپسی تعلقات کو مضبوط کریں ، قومی یکجہتی کو فروغ دیں ،اپس میں پیار و محبت سے رہیں ، تاکہ ملک کی گنگا جمنی تہذیب مضبوط ھو ،اللہ تعالی سے دعاء ھے کہ اس محبت کے ماحول کو مضبوط کرے اور ملک کو امن و شانتی کا گہوارہ بنائے

ابوالکلام قاسمی شمسی