نیپال میں انتہائی امن و امان کے ساتھ منایا گیا عیدالاضحی کا تہوار

نیپال(پریس ریلیز) ہرسال کی طرح امسال بھی نیپال میں انتہائی جوش و خروش کے ساتھ منایا گیا عیدالاضحی ۔واضح رہے کہ برادر وطن نے بھی اپنے مسلم بھائیوں کو انتہائی عقیدت و محبت کے ساتھ پیش کیا عید الاضحیٰ کی پرخلوص مبارکباد۔اور پورے ملک میں مسلمانوں نے انتہائی امن و امان اور سلامتی کے ساتھ منایا گیا عید الاضحیٰ کا تہوار۔
نیپال کے مسلمانوں نے گزشتہ قربانی کے ایام میں ان گنت جانوروں کو اللہ کے نام پر ذبح کرکے یہ ثابت کردیا ہےکہ ہم اسلام کے شیدائی ہیں اور ہم ہر حال میں اللہ اور ان محبوب حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے احکام کو عملی جامہ پہناتے رہیں گے،جیساکہ ہم نے گزشتہ قربانی کے ایام میں بے شمار جانوروں کو راہ خدا میں ذبح کرکے : فصل لربک وانحر (کوثر) کو عملی جامہ پہنایا ہے ۔
یہ ہماری قربانی ،تو بطور یاد گار حضرت جد امجد ابراہیم علیہ السلام کی قربانی ہے؛ورنہ تو ہمارے دلوں میں ایسے جذبات بھی موجود ہیں کہ اگر آج ہی باری تعالیٰ کو ہماری جان و مال اور اولاد کی قربانیوں کی ضرورت پڑے گی،تو ہم بلاتردد آج ہی اپنے آپ کو اور اموال و اولاد کو قربان کرنے کے لیے تیار ہیں۔
اور حقیقت یہ ہے کہ مسلمان نام ہی ہے ایسے لوگوں کا جو ہمہ وقت اللہ اور ان کے رسول حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک ایک حکم پر اپنی ہر چیز ؛حتی کہ اپنی جان کو بھی قربان کرنے کے لیے بطیب خاطر تیار رہتے ہوں اور اسی میں در اصل اپنی کامیابی سمجھتے ہوں ۔
الغرض ایام قربانی میں مسلمانوں نے اپنے عمل سے یہ ثابت کردیا کہ ہماری نماز ،قربانی ،جینا،مرنا سب کچھ اللہ ہی کی خاطر ہے اور اس زندگی میں کیا فایدہ؟جس میں اللہ کے حکم کی تعمیل نہ ہو۔
اس حقیقت سے بھی ہر مسلمان باخبر ہے کہ ہماری تخلیق کا مقصد ہی خالق کی عبادت اور ان کے ہر ہر حکم کی بجا آوری ہے۔اگر ہماری تخلیق سے اللہ کا مقصد حاصل نہ ہوسکے ،تو پھر میں،یہ نہیں سمجھتا کہ اللہ کی زمین پر مجھے زندہ رہنے کا من جانب اللہ کوئی حق حاصل ہو ۔اس لیے ہم اللہ کے ایک ایک حکم کو تاموت عملی جامہ پہناتے رہیں گے۔
ان باتوں کا اظہار خیال مولانا انوار الحق قاسمی (ترجمان جمعیت علماء روتہٹ نیپال)نے کیا ہے۔