جنگِ آزادی میں مسلمانوں کا کردار

از قلم: محمد ثاقب قاسمی
سیکریٹری مجلس احرار اسلام پنجاب

15 اگست 1947 کی تاریخ ہندوستان کی ایک یادگار اور اہم ترین تاریخ ہے، اسی تاریخ کو ہمارا یہ پیارا وطن ہندوستان انگریزوں کی غلامی سے آزاد ہوا، تقریبا دوسوسال تک مسلسل قربانیوں اور جانفشانیوں کے بعد آزادی کا یہ دن دیکھنے کو نصیب ہوا، جانوں کا نذرانہ پیش کرنے اور سب کچھ لٹانے کے بعد ہمارا ہندوستان آزاد ہوا، آزادی اللہ سبحانہ وتعالی کی ایک بہت بڑی نعمت ہے جبکہ غلامی رب کائنات کی طرف سے ایک عذاب ہے، اس آزادی کی خاطر ہمارے اسلاف، رہنما، قائدین اور مسلم عوام نے جانی ومالی قربانیاں پیش کیں، تحریکیں چلائیں، پھانسی کے پھندے پر چڑھے، تب کہیں جاکر انگریزوں کے ناپاک قدم سے ہمارا ملک پاک ہوا، انگریزوں نے ہند پر حکومت کرنے کیلئے طرح طرح کی چالیں چلیں، تدبیریں اختیار کیں، پھوٹ ڈالو اور حکومت کرو کے پروپیگنڈہ کو اختیار کیا، ہندوستان کی عوام کو ہندو مسلم کے نام پر آپس میں لڑانے کی کوششیں کیں، ہمارے ملک کی گنگا جمنی تہذیب کو مسمار کرنے کی تدبیریں اختیار کیں، لیکن ان کی کوششیں رائیگاں ہوگئیں، الغرض ایک دن وہ آیا کہ ان لوگوں کو ہمارا ملک چھوڑ کر جانا پڑا، اور ہمارا ملک انکی غلامی سے آزاد ہوا۔

انگریز جب ہندوستان پہنچے تھے تو تاجروں کی حیثیت سے پہنچے تھے اور عام لوگوں نے انھیں ایک معمولی تاجر کے سوا اور کچھ نہیں سمجھا تھا لیکن ان کی نیت صاف نہیں تھی، انھوں نے اپنوں کی کمزوری اور آپسی نااتفاقی سے فائدہ اٹھا کر اپنی شاطرانہ اور عیارانہ چالوں کے ذریعہ ہندوستانی قوم کو غلامی کی زنجیروں میں قید کرنے میں کامیاب ہوگئے، یہاں کی دولت و ثروت کو لوٹنے لگے، یہاں کے باشندوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑنے لگے اور یہاں کے تہذیب وتمدن سے کھلواڑ کرنے لگے اور اس کا سلسلہ مزید بڑھتا ہی گیا، پانی جب سر سے اوپر ہوگیا، تو ہندوستانیوں کے دلوں میں آزادیٴ وطن کا جذبہ پیدا ہوا اور سب سے پہلے مسلمانوں نے اس خطرے کی سنگینی کو محسوس کیا، سراج الدولہ اور سلطان ٹیپو شہید اور دیگر مسلم فرماں روا اپنی تمام تر قوتوں کے ساتھ جان ہتھیلی پر رکھ کر میدانِ جنگ میں کود پڑے اور یوں تحریک آزادی کی ابتداء ہوئی پھر یہ تحریک رکی نہیں بلکہ اس نے زور پکڑنا شروع کیا اور اب علماء ہند کفن باندھ کر انگریزوں کو للکارنے لگے اور یہ ایسی جماعت تھی جس کی جفا کشی عزائم، صبر آزمائی، دور اندیشی اور ایثار و قربانی نے اس دور کی تاریخ کو انقلاب آفریں بنادیا۔

چنانچہ ان ہزاروں علماء کرام اور مجاہدین آزادی کی ایک لمبی فہرست ہے جنھوں نے آزادی کی خاطر ہر طرح کی قربانیاں پیش کیں اور قائدانہ رول ادا کیا، خصوصاً شاہ ولی اللہ محدث دہلوی، شاہ اسحاق محدث دہلوی، مولانا شاہ عبد العزیز دہلوی، مولانا اسمٰعیل شہید، مولانا عبد الحئی، مولانا قاسم نانوتوی، شیخ الہند، مولانا رشید احمد گنگوہی، حاجی امداد اللہ مہاجر مکی، مولانا فضل حق خیرآبادی، حافظ ضامن شہید، مولانا حسین احمد مدنی، مفتی کفایت اللہ، مولانا محمد علی جوہر، مولانا حبیب الرحمن لدھیانوی اور مولانا ابو الکلام آزاد وغیرہ جیسے پیکر استقلال اور کوہ گراں پیدا ہوئے، جنھوں نے اپنی تقریروں، تحریروں، بلکہ اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرکے آزادیٴ وطن کی بنیاد رکھی۔

انھیں علماء کرام کی جلائی ہوئی مشعل کی روشنی میں 1857ء کی جنگ آزادی بہادر شاہ ظفر کی قیادت میں لڑی گئی جس میں ہندوستان کے ہر فرقے کے لوگ شامل تھے، لیکن یہ جنگ ناکام ہوئی اور ناکامی کی قیمت سب سے زیادہ مسلمانوں کو چکانی پڑی، تقریبا دو لاکھ مسلمان شہید ہوگئے جن میں تقریبا باون ہزارعلماء تھے، ان کی جائدادیں لوٹ لی گئیں، اس قدر جانی و مالی نقصان کے باوجود تحریک آزادی کا سلسلہ مختلف شکلوں میں جاری رہا اور بالآخر ہمارا ملک تمام فرقوں، بالخصوص مسلمانوں اور خاص طور سے علماء کرام کی جہد مسلسل اور جانی ومالی قربانی کے بعد آزاد ہوا۔

ہندوستان کی جنگ آزادی میں مسلمانوں کا کردار تاریخ میں ایک سنہرے باب کی حیثیت رکھتا ہے، یہ مسلمانوں کی حب الوطنی، جوش، ولولہ اور ایثارو قربانی کی لافانی داستان ہے، تحریک آزادی میں مسلمانوں نے ایک بے مثال کردار ادا کیا اور مادر وطن کو انگریزوں کے پنجہء غلامی سے آزاد کرنے کے لیے نہ صرف نا قابل بیان اذیتیں برداشت کیں، بلکہ جان و مال کی عظیم قربانیاں دینے سے بھی باز نہیں آئے، میں یہ نہیں کہتا کہ صرف مسلمانوں نے ہی اس ملک کو آزاد کرنے میں مشقتیں اور محنتیں کی ہیں بلکہ ہمارے ملک کے ہندو، سکھ اور عیسائی بھائیوں نے بھی اس ملک کی آزادی میں اہم رول ادا کیا ہے، مہاتما گاندھی جی، پنڈٹ جواہر لال نہرو، رابندر ناتھ ٹیگور، اور شہید بھگت سنگھ کی قربانیاں بھی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہیں، لیکن بد قسمتی سے انگریزوں کی طرف سے اپنی حکومت بنائے رکھنے کے لیے اپنائی گئی divide and rule پالیسی کی وجہ سے جہاں تقسیم ہند کا سانحہ پیش آیا، وہیں ہندوستان میں موجود مسلمانوں اور ہندوؤں کے درمیان مضبوط اتحاد کو توڑنے اور نفرتوں کی خلیج وسیع کرنے کا بھی سبب نکل آیا۔

ہندوستان میں بسنے والی ہندوستانی قوم جو کہ مختلف مذاہب، ذات اور ثقافتوں پر قائم ہوئی تھی آج ہمارا ملک اس منہج سے ہٹتا جارہا ہے، افسوس صد افسوس! اس وقت ہمارا ملک جس بحرانی دور سے گزر رہا ہے وہ ہم سب پر ظاہر وعیاں ہے فرقہ پرست عناصر اپنے عزائم کی تکمیل کے لیے نا قانون کا خیال کر رہے ہیں اور نا ہی انسانیت کے اصولوں کو مان رہے ہیں، اسلام اور مسلمانوں کو ہر ممکن نقصان پہنچا رہے ہیں۔ فرقہ پرست اور متعصب لوگ مدارس اسلامیہ اور مساجد و مسلمانوں کے خلاف ایک منظم تحریک چلائے ہوئے ہیں، مدارس، مساجد اور مسلمانوں کے کردار کو مسخ کیا جارہا ہے اور اسلامی تشخص کو ختم کرنے کی مہم میں زبردست شدت آئی ہوئی ہے۔

اسی طرح ہم دیکھتے ہیں کہ جب بھی جنگ آزادی کے مجاہدین اور شہیدو ں کی بات ہوتی ہے تو مسلمانوں میں بس مولانا ابوالکلام آزاد اور شہید ٹیپو سلطان کا سرسری تذکرہ کرکے بات ختم کردی جاتی ہے۔ واقعہ یہ ہے کہ جنگ آزادی کی تاریخ کو فرقہ وارانہ رنگ دینے والوں نے مسلم انقلابیوں، شاعروں اور مصنفین کی جنگ آزادی میں حصہ داری کو جان بوجھ کر نظر انداز کر دیا جس کا لازمی نتیجہ یہ ہے کہ آج کی نسل اس پہلوسے با لکل لا علم ہے۔ اور منفی پروپگنڈہ کی وجہ سے ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان پائی جانے والی خلیج آئے دن وسیع ہوتی جارہی ہے۔

ہمارے اسلاف کی قربانیوں کو اسکول وکالج کے نصاب کی کتابوں سے نکالا جارہا ہے صرف ٹیپو سلطان اور مولانا ابوالکلام آزاد کی قربانی کے دو چند واقعات کے علاوہ دوسرے علماء کی قربانیوں کو نصاب میں جگہ نہیں دی جارہی ہے، تاریخ سے ہمارے نام ونشان کو مٹانے کی انتھک کوششیں کی جارہی ہیں، عصبیت کا تو یہ عالم ہے کہ دوسری قوموں کے مجاہدینِ آزادی وطن کے نام کی سڑکیں، پارک، ہاسپیٹل اور اسکول تو تیزی سے بن رہے ہیں لیکن ہمارے بزرگوں کے نام سے موسوم کچھ بھی بنانا گوارہ نہیں کیا جاتا، افسوس! حد تو یہ ہوگئی کہ ہماری تاریخی مقامات کے نام کو بدلا جارہا ہے، ہمارے بزرگان دین کے نام سے موسوم تمام تر جگہوں اور چیزوں کے نام کو غیروں کا نام دیا جارہا ہے، ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اپنے ملک اور قوم کے ہیرو، ان مجاہدین کرام کو خراج عقیدت پیش کریں اور ان کی تاریخ اور کارناموں سے واقفیت حاصل کریں اور ان کے نقوش زندگی کو اپنے لئے مشعل راہ بنائیں۔