نعت نبی: تم ہو شاہ امم اے حبیب خدا

تم ہو شاہ امم اے حبیب خدا
شاہ عرب و عجم اے حبیب خدا

مجھ کو گھیرے کیوں غم اے حبیب خدا
جب ہے تیرا کرم اے حبیب خدا

جیسا تیرا حرم اے حبیب خدا
کیا ہو باغ ارم اے حبیب خدا

آپ کا نوری چہرا نگاہوں میں ہو
جس گھڑی نکلے دم اے حبیب خدا

مجھ پہ برسا کرے ہر گھڑی میرے شاہ
تیرا لطف و کرم اے حبیب خدا

قبر میں میری آئیں گے جب مصطفیٰ
پھر مجھے کیوں ہو غم اے حبیب خدا

روز محشر کھلے گی خطا جب مری
رکھنا میرا بھرم اے حبیب خدا

آپ کی شان و عظمت، مقام آپ کا
کب ہو مجھ سے رقم اے حبیب خدا

بس تمہارے سوا کون ہے دوسرا
اور کہاں جائیں ہم اے حبیب خدا

سخت پتھر بھی دے دے جگہ آپکو
آپ رکھ دو قدم اے حبیب خدا

کر رہی ہے بہت اہل دنیا یہاں
ہم پہ ظلم و ستم اے حبیب خدا

تیرے صدقے پلوں اور تجھ سے ہی ہے
میرا ناز و نعم اے حبیب خدا

تم ہنساتے ہو روتے ہوؤں کو شہا
میری آنکھیں ہیں نم اے حبیب خدا

تیرے آنے سے فارس کی آتش بجھی
واہ جاہ و حشم اے حبیب خدا

دیجیے کچھ گہر اپنے شاہد کو بھی
میرے بحر اتم اے حبیب خدا

ازقلم: محمد شاہد رضا رضوی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے