یو اے ای ٹریفک قوانین خلاف ورزی، جرمانہ 50ہزار درہم

تحریر: نور حسین افضل
اسلامک اسکالر، مصنف، کالم نویس
صدر: پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ (مشرق وسطی)

متحدہ عرب امارات نے ہمیشہ عوام کی جان، مال عزت آبرو کی حفاظت عزت کو فوقیت دی ہے۔ جس کی بدولت آج دنیا بھر میں ممتاز شناخت کا حامل ہے، اس میں مزید بہتری کے لیے ابوظہبی امارات نے ٹریفک قوانین کو مزید سخت کر کے جرمانوں میں اضافہ کر دیا گیا ہے، توقع ہے کہ اسے مزید بہتری آئے گی۔
ابوظہبی نے ٹریفک ایکسیڈنٹ پر قابو پانے کے لیے ایک نیا ٹریفک قانون جاری کیا ہے، جبکہ متعدد خلاف ورزیوں پر جرمانے میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔ ابو ظبی امارات کے مطابق مطالعات سے پتہ چلتا ہے، کہ خلاف ورزیوں کی وجہ سے 894 حادثات ہوئے، جس کے نتیجے میں 2019ء میں 66 افراد ہلاک ہوئے، اسی وجہ سے 2020ء کے قانون نمبر 5 کے جرمانے میں اضافہ کرنا پڑا۔ یہ نیا فیصلہ وفاقی حکومت کا نہیں۔ صرف ابوظہبی امارات پر لاگو ہوگا۔
ذیل میں ٹریفک قوانین کی ان خلاف ورزیوں کی فہرست دی جارہی ہے جن کا جرمانہ 50,000 درہم تک ہے۔

  1. غیر قانونی روڈ ریسنگ:
    50,000 درہم کا زیادہ سے زیادہ جرمانہ اور ساتھ ہی گاڑی ضبط کرنا۔
  2. درست نمبر پلیٹس کے بغیر کار چلانا: 50,000درہم کا زیادہ سے زیادہ جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  3. پولیس کی گاڑیوں کو نقصان پہنچانا: 50,000 درہم کا زیادہ سے زیادہ جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  4. سرخ ٹریفک لائٹ کو نظر انداز کرنا:
    50,000 درہم کا زیادہ سے زیادہ جرمانہ، گاڑی اور ڈرائیونگ لائسنس 6 ماہ کے لیے ضبط کرنا۔
  5. سڑک پار کرنے والوں کو ترجیح نہ دینا:
    5,000 درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  6. اچانک انحراف:
    5,000 درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  7. ضرورت سے زیادہ رفتار کی وجہ سے حادثے کا سبب بننا:
    5,000 درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  8. ٹیلگیٹنگ(گاڑی کا عقبی حصہ):
    5,000درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  9. دس سال سے کم عمر کے بچوں کو کار کی اگلی سیٹ پر بیٹھنے کی اجازت:
    5,000 درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
  10. سات ہزار درہم سے زیادہ ٹریفک جرمانے والے ڈرائیور کو طے کرنا ہوگا، یا اس کی گاڑی کو ضبط کر لیا جائے گا۔
  11. بغیر اجازت کے گاڑی کے انجن یا چیچس میں غیر ضروری تبدیلیاں کرنا:
    10,000 درہم جرمانہ اور ضبط کرنا۔
    12.حد رفتار سے 60 کلومیٹر فی گھنٹہ یا اس سے زیادہ چلانا:
    5,000 درہم جرمانہ اور گاڑی ضبط کرنا۔
    13.کسی بھی دوسرے کیس میں ضبط شدہ گاڑی کے دعوے کی قیمت 100 درہم فی ہر خلاف ورزی ہے جس کے لیے گاڑی کو ضبط کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔
  12. نئے فیصلے کے تحت تین ماہ تک ضبط کرنے کے بعد بھی ایسی کسی بھی گاڑی کی نیلامی کی جائے گی، جن کا دعویٰ نہیں کیا گیا ہوگا۔
    اگر گاڑی کی قیمت مقررہ جرمانے سے کم ہے، تو بقیہ بیلنس مجرم کی ٹریفک فائل میں شامل کر دی جائے گا، اور خلاف ورزی کو منسوخ نہیں کیا جائے گا۔
    ان نئے قوانین پر عمل کرتے ہوئے محتاط ڈرائیونگ کیجئے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے