مدرسہ ضیاء الاسلام کے استاذ عبدالرب کا اچانک انتقال متعلقین میں غم کی لہر

فتح پور،بارہ بنکی(ابوشحمہ انصاری)مدرسہ ضیاء الاسلام کے استاذ عبدالرب کا سنیچر کی شب تقریبا ساڑھے گیارہ بجے دل کا دورہ پڑنے سے انتقال ہوگیا ان عمر تقریبا 55سال تھی ان کے انتقال کی خبر جیسے ہی سوشل میڈیا اور مسجدوں کی میناروں سے عام ہوٸی لوگ ان رہائش گاہ پہونچے ان کے بڑے فرزند نے بتایا کہ والد محترم کی اچانک طعبیت بگڑی انھیں الجھن زیادہ محسوس ہورہی تھی مقامی پرائیویٹ اسپتال میں دکھایا گیا مگر فائدہ نہیں ہوا اچانک حرکت قلب بند ہو جانے سے داعی اجل کو لبیک کہہ دیااور مالک حقیقی سے جا ملے موصوف اخلاق و اخلاص کے پیکر تھے پسماندگان میں بیوہ کے علاوہ دو بیٹے اور دو بیٹیاں ہیں واضح ہو کہ گذشتہ 27 نومبر کو ان کے چھوٹے بھاٸی محمد عاصم کا انتقال ہوگیا تھا وہ محکمہ آبکاری میں ملازمت کررہے تھے موصوف کی نماز جنازہ بعد نماز ظہر مرکز مسجد کے صحن میں حافظ صبغت اللہ کی اقتدا میں سیکڑوں سوگواروں نے ادا کی بعد ازاں ان کے آبائی قبرستان ریلوے اسٹیشن روڈ پر تدفین عمل میں آٸی ان کے آخری سفر میں جن لوگوں نے شرکت ان میں بالخصوص سابق چیئرمین محمد مشکور نگر پنچائت کلرک ،ندیم احمد،نظام الدین، نسیم گڈو، ارشاد احمد قمر ضیاء الدین، شیخ مطیع اللہ، فہیم صدیقی، ابوذر ،انصاری، احمد سعید، محمد راہل،شاکر بحلیمی رحمان عباسی، ڈاکٹر وجہل القر، محمد ارشاد، جنید صدیقی، حسان ساحر، قاری ستار اقبال صدیقی محمد صابر، محمد خلیق پپو، محمد کفیل چندہ ، مصباح الدین،نسیم ندوی، محمد سہیل، محمد اکرام آصف منیجر، محمد عارف مدن، معین سہالی ،ماسٹر،، مبین سہالی، خالد محمود، ظفر الاسلام پپو نشاط منصوری ،عبید میڈیکل اسٹور، مدن عبید خاں کے علاوہ مدرسہ ضیاء الاسلام کے اساتذہ و عملہ موجود رہا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے