تاج محل

تابش روئے حسیں، تا ج محل،شر ح جمال
جیسے شاعر کی غزل جیسے مصور کا خیال

ہند کو ناز ہے جس پر وہ حسیں تا ج محل
کو ئی تمثیل نہ تیر ی نہ کو ئی تیر ا بد ل
ا ہل د ل کےلیے ا حسا س کی دھڑ کن گو یا
بو ئےگل،خو ا ب سحر،چا ندکا د ر پن گو یا
کتنے نا موں سے تجھے یا د کر یں تاج محل
ا پنےہرعہد کی تا ر یخ میں خو د ا پنا بد ل
آ ئینہ خا نہء د ل میں تر ی تصو یر یں ہیں
حسن کے نا م جنوں خیز سی تحریریں ہیں
قصہءشو ق و طلب،ماجرا ئے ہجر ووصا ل
جیسےشاعر کی غزل جیسے مصور کا خیال

ا ک نئے ہند کی تہذ یب و تمد ن کا نشا ں
کا و ش خو ا ب کی تعبیر کا جا ن عنو ا ں
ہند کی عظمت ر فتہ کا پتا د یتا ہے
مر مر یں تا ج ہمیں د ر س و فا د یتا ہے
ملک سے قوم سےہند و سےمسلماں سے و فا
یعنی ا نسان کے رشتے سےہرا نساں سے وفا
کوئی بھی غیرنہیں،جوبھی ہیں سب اپنے ہیں
ا پنے تہذ یبی تعلق کے سبب ا پنے ہیں
ر و ئے تہذ یب و تمد ن کو جلا د یتا ہے
تا ج خو د ا پنی حقیقت کا پتا د یتا ہے
مظہر عشق و محبت کا د رخشا ں یہ کما ل
جیسے شاعر کی غز ل جیسےمصور کا خیال

ر ا ت کی آ نکھ سے ٹپکا ہو ا آ نسو جیسے
صبح کےدودھیا آ نچل کی ہےخوشبوجیسے
جس طر ح آ خر شب چا ند کا شفا ف بد ن
یا کسی خو ا ب کی تکمیل کا رو شن در پن
جیسے بلو ر کے سا غر میں ہو ا نگو رکا رس
جیسےپھیلی ہوئی خوشبوسی نفس تابہ نفس
کسی کا فر کی جو ا نی، کسی ا لھڑ کا شبا ب
جیسےمحجوب سی آنکھو ں میں ہمکتاہواخوب
پائےرقاصہء فطر ت میں ہے گھنگھروکی مثال
جیسے شا عر کی غز ل جیسے مصو ر کا خیال

صبح آ غو ش کشا ہے کہ ا ٹھا لے تجھ کو
سورج ا س فکرمیں ہےا و راجا لےتجھ کو
و ا د ئ جمنا بھی شادا ب ہے تیر ی خاطر
وقت کی آنکھ بھی بےخواب ہےتیری خاطر
تو کسی شا ہ کی ا لفت کامظا ہر ہی سہی
یا طلسما ت کی دنیا ؤں کاساحر ہی سہی
تیرے معما رتو د را صل و ہ مزد و ر ہو ئے
جن کےدل خون ہوئے،دیدےبھی بےنورہوئے
جن کی عظمت کےفسانوں کورقم کرنامحال
جیسے شاعر کی غزل جیسے مصور کا خیال

شہر یاروں کے ہو ں جذبےکہ عوامی جذ بے
قلب ا نسا ں میں محبت کے دو ا می جذبے
عشق جب ڈ وب گیا حسن کی گہرائی میں
بن گیا تا ج محل ا یک ہی ا نگڑ ا ئی میں
جذبہء شو ق وجنو ں ہو تو غز ل ہو تی ہے
کو ئی رنگین فسو ں ہو تو غز ل ہو تی ہے
عشق جب بڑھ کے جنوں خیز عمل بنتا ہے
تب کہیں جا کے کو ئی تا ج محل بنتا ہے
مشترک ذ و ق فراواں کا ہے بے مثل کما ل
جیسےشاعرکی غزل جیسےمصور کا خیا ل

نرم ہونٹوں پہ ہےبےساختہ مسکان کہ تاج
دل میں ا نگڑ ا ئی سا لیتاہواارمان کہ تاج
سینہء سا ز میں بید ا ر سا نغمہ کو ئی
ادھ کھلی آ نکھوں میں جاگاہواسپناکوئی
ا پنے ہی نو ر میں ڈو با ہو اخود ماہ منیر
تا ج ! ا ئے آ بر و ئے ہند، محبت کی نظیر
تیر ی پا کیزہ و معصوم فضاؤں کوسلام
آ ج کی شا م ترے حسن،ترے پیا رکےنا م
نہ کہیں تیرابدل ہے نہ کو ئی تیر ی مثال
جیسےشاعرکی غزل جیسے مصور کاخیال

خیال آرائی: انس مسرور انصاری
قومی اردو تحریک فاؤنڈیشن(رجسٹرڈ)
رابطہ: 9453347784

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے