ملاقات: بیس سال بعد

ایک زمانے میں، قدرتی مناظر کے درمیان واقع ایک پرانے گاؤں میں، عائشہ نام کی ایک ماں رہتی تھی، جس سے ابراہیم نامی بیٹا پیدا ہوا۔ وہ الہی کے لئے اپنی اٹل عقیدت کے لئے مشہور تھی، اور اس کے نرم سلوک نے سب سے اس کی تعریف کی۔ جہاں تک اس کے پیارے بیٹے ابراہیم کا تعلق ہے، وہ چھوٹی عمر سے ہی ایک غیر معمولی ذہانت کے مالک تھے، جو ہمیشہ وجود کے رازوں سے پردہ اٹھانے میں مصروف رہتے تھے۔ اس کے ناقابل تسخیر تجسس کی کوئی حد نہیں تھی، جس نے گاؤں والوں کو اس کی شاندار حکمت پر حیرت میں ڈال دیا۔

ایک ناخوشگوار دن، ٹریجڈی نے ان کے پرسکون ٹھکانے پر حملہ کیا۔ معصومیت سے کھیلتے ہوئے، ابراہیم گھنے جنگل میں چلا گیا اور پریشان ہو گیا۔ لیکن یہ کوئی معمولی مہم جوئی نہیں تھی۔ اس نے جنگل کے دل کی گہرائی میں قدم رکھا تھا، جہاں بلند و بالا درخت آسمان کی طرف پہنچ گئے تھے۔ اس طرح اس نے اپنی بقا کے لیے ایک خوفناک جستجو کا آغاز کیا، جس نے اس کے معصوم کھیل کو زندگی کے لیے ایک مشکل جدوجہد میں بدل دیا۔

دیہاتیوں کی تلاش اور عائشہ کی آنسوؤں سے بھری دعاؤں کے باوجود نوجوان ابراہیم لاپتہ رہا، کہیں بھی نہ ملا۔ اس چمکدار لڑکے کی گمشدگی پر پوری برادری نے سوگ منایا اور عائشہ کا دل مایوسی کے بوجھ تلے دب گیا۔ نقصان ایک لاپتہ بچے سے کہیں زیادہ بڑھ گیا؛ یہ گاؤں کی اجتماعی روح میں ایک خلاء تھا، کیونکہ سب ابراہیم کی روشن روح کو پالنے کے لیے پروان چڑھے تھے۔

جیسے جیسے سال گزرتے گئے، عائشہ کا غم طول پکڑتا رہا، اور اس کے اندر کی امید کی چنگاری بجھنے سے انکاری تھی۔ وہ بار بار مقدس مقامات پر جاتی تھی، سکون کی تلاش میں اور الہی سے ایک معجزہ کے لیے التجا کرتی تھی جو اسے اس کے پیارے بیٹے کے ساتھ دوبارہ ملا دے۔

   عائشہ کا غیر متزلزل ایمان محض طعنہ نہیں تھا۔ یہ اس کے وجود کا نچوڑ تھا، ان گھمبیر اوقات میں لچک کا ایک گہرا سرچشمہ۔ اس کا ایمان کوئی تجریدی تصور نہیں تھا۔ یہ ایک غیر متزلزل یقین کے طور پر ظاہر ہوا کہ معجزات رونما ہو سکتے ہیں، ایک ثابت قدم عقیدہ جس سے وہ جوش و خروش سے چمٹی ہوئی تھی۔

بیس سال گزر گئے، اور گاؤں میں تبدیلی آئی، زندگی کے آگے بڑھنے کے ساتھ نئی نسلیں پیدا ہوئیں۔ لیکن عائشہ کے دل نے اپنے کھوئے ہوئے بچے کی یادوں کو کبھی نہیں چھوڑا۔ وہ اکثر جنگل کی طرف جاتی تھی، جہاں اس کے پراسرار غائب ہونے کی جگہ تھی، اور وہاں، یادوں میں ڈوبی ہوئی، اسے جذبات کے بھنور کا سامنا کرنا پڑا۔ کبھی کبھی، وہ خاموشی سے بیٹھی، ابراہیم کے قہقہوں کی دھنیں سناتے ہوئے اس کے گالوں پر آنسو بہہ رہے تھے۔

ایک دن، جب وہ ایک چمکتی ہوئی ندی کے کنارے بیٹھی تھی، مسافروں کے ایک گروپ نے اس کی نگاہیں جمائی تھیں۔ ان میں ایک مبلغ بھی تھا جس کی دلفریب فصاحت و بلاغت نے عائشہ کی روح کو جوڑ دیا۔ دور سے، وہ مبلغ کے بیانات کو سنتی تھی، جو ایک نرم زفیر کی طرح گونجتی تھی، اس کے خیالات اور جذبات کے دھاروں کو آہستہ سے ہلاتی تھی۔ اس کی گفتگو نے اس کے اندر ایک ہلچل پیدا کر دی، ابراہیم کے لیے اس کی محبت اور اس پیارے رشتے کی یادوں کو دوبارہ زندہ کر دیا جو انہوں نے کبھی بانٹ دیا تھا، اس سے پہلے کہ تقدیر کا ہاتھ انہیں الگ کر دے۔

مبلغ کے خطبہ کے اختتام پر، عائشہ اس کے پاس پہنچی، اس کا دل اس کی یادوں اور وجہ سے لڑ رہا تھا۔ دو دہائیاں گزر جانے کے بعد یہ مسافر اس کا کھویا ہوا بیٹا کیسے ہو سکتا ہے؟ ایسا امکان ناممکن، بمشکل قابل فہم لگتا تھا۔

ان کے درمیان ایک قابل ادراک رابطے کے ساتھ، مبلغ نے استفسار کیا، "کیا ہم پہلے ملے ہیں؟ آپ کے چہرے سے ایک عجیب و غریب واقفیت ہے۔”

عائشہ نے مبلغ کو قریب سے دیکھا، اور اس کی آنکھیں تیز رفتار پہچان کے ساتھ چمک اٹھیں۔ "تم… تم میرے بیٹے ابراہیم سے بہت مشابہت رکھتے ہو، جو کئی سال پہلے مجھ سے کھو گیا تھا،” وہ کہنے میں کامیاب ہوئی، اس کی آواز جذبات سے کانپ رہی تھی۔

مبلغ کی آنکھیں حیرت سے پھیل گئیں، اور اس کے گالوں پر آنسوؤں کی لہریں بہہ رہی تھیں۔ "ماں، یہ میں ہوں، ابراہیم!” اس نے اعلان کیا، جذبات کے ایک زبردست سیلاب نے ان دونوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

ایک لمحے میں، عائشہ کے دل میں جذبات کا ایک طوفان اٹھ گیا – بے اعتباری، خوشی اور بے پناہ محبت ایک ہنگامہ خیز طوفان میں جڑی ہوئی تھی۔ یہ غیر متوقع موڑ کے طوفانی سفر کے مترادف تھا۔

خوشی سے مغلوب ہو کر، عائشہ نے خود کو مبلغ کی آغوش میں لپٹا ہوا پایا۔ دو دہائیوں کی جدائی کے بعد، آخرکار ان کی روحیں دوبارہ مل گئیں، اور دیہاتیوں نے جو مبلغ کی فہم و فراست کو سننے کے لیے جمع ہوئے تھے، اس معجزانہ ملاپ کی گواہی دی، ان کے سامنے کھڑی محبت اور ایمان کی گہرائی کو چھو لیا۔

ابراہیم نے اپنی ماں اور دیہاتیوں کے ساتھ اپنی غیر معمولی اوڈیسی کا اشتراک کرنے کے لیے آگے بڑھا اور یہ کہانی بیان کی کہ کس طرح، اس منحوس دن، وہ جنگل میں بھٹک گیا تھا، جسے صرف ایک دور دراز شہر میں ایک نیک خاندان نے پایا اور اس کی پرورش کی۔ انہوں نے اسے زندگی کے اسباق، محبت کے جوہر اور اسلام کی خوبیاں سکھائی تھیں۔

سالوں کے دوران، ابراہیم اپنی ماں کی یادوں سے پوری طرح چمٹے رہے، اپنے آبائی گاؤں واپس جانے کے لیے تڑپ رہے تھے۔ بالآخر، تقدیر نے اسے واپس لے جانے کی سازش کی، نہ صرف ایک پرجوش بیٹے کے طور پر بلکہ اسلام کے ایک مبلغ کے طور پر، ایک بار پھر اپنی طویل عرصے سے کھوئی ہوئی ماں کی آغوش میں کھڑے ہونے کے لیے۔

اس معجزانہ ملاپ کی خبر گاؤں میں آگ کی طرح پھیل گئی، پڑوسی شہروں سے لوگ ماں اور بیٹے کے درمیان ناقابلِ محبت کا مشاہدہ کرنے کے لیے اپنی طرف متوجہ ہوئے۔ ابراہیم کی دانشمندی اور شفقت نے دور دور تک دلوں کو چھو لیا، جس سے وہ ایک مثالی نمونہ کے طور پر مشہور ہوئے۔

عائشہ، اپنے بیٹے کی محبت اور برادری کی تعظیم کی گرمجوشی میں لپٹی، اپنے بقیہ دن قناعت میں گزارے۔ اور جب اس کے پرے سفر کرنے کا وقت آیا تو ابراہیم نے نرمی سے اس کا ہاتھ پکڑ لیا، اس دیکھ بھال کی یاد دلاتا ہے جو اس نے ایک بار اس پر کی تھی

عائشہ اور ابراہیم کی کہانی زندگی کے دلفریب سفر، جذبات کی قوت جو ہمارے اعمال کو آگے بڑھاتی ہے، اور ماں اور اس کی اولاد کے درمیان ناقابل تسخیر بندھن کا ایک لازوال ثبوت کے طور پر کام کرتی ہے۔ یہ ہمیں اپنے محبوب کی قدر کرنے اور امید کی پرورش کرنے کا اشارہ کرتا ہے، کیونکہ ویرانی کے سائے میں بھی، معجزے ہمارے راستے کو روشن کر سکتے ہیں۔ ان کی محبت اور ایمان کی وراثت برقرار ہے، جو آنے والی نسلوں کو متاثر کرتی ہے۔

اس طرح، میرے معزز قارئین، اس داستان کو اپنے دل کے قریب رکھیں، اور اس گہرے گہرائی کو قبول کریں جو زندگی عطا کرتی ہے۔میں، عدنان، آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ میں نے یہ افسانہ صرف ایک ماں اور اس کے بیٹے کے درمیان موجود گہرے رشتے پر زور دینے کے لیے لکھا ہے۔ میں چاہتا ہوں کہ آپ سب اس بات کا احساس کریں کہ ایک ماں کو اپنے بیٹے کے لیے کتنی محبت ہوتی ہے اور ایک بیٹے کو اپنی ماں کی کتنی دلجوئی کرنی چاہیے۔ اکثر، ہم بیٹوں کو ایسے جذبات کا اظہار کرتے ہوئے دیکھتے ہیں جو اسلام میں قابل قبول نہیں ہیں یا اپنی ماؤں کے خلاف شکایت کرتے ہیں۔ میں نے یہ افسانہ اس لیے لکھا ہے کہ آپ سب کے ذہنوں میں یہ نقش ہو جائے کہ ماں اور بیٹے کا رشتہ کتنا گہرا ہونا چاہیے۔ مزید یہ کہ اس بات پر توجہ دینا ضروری ہے کہ ماں ایک اچھی پرورش کرنے والی ہوتی ہے اور اچھی پرورش ہر اس گھرانے میں کی جاتی ہے جہاں اسلام کی جڑیں بہت گہری ہوں۔ اس طرح کی پرورش ایک بچے کو ایک عالم اور صالح اسلامی فرد میں تبدیل کر سکتی ہے۔

افسانہ نگار: عدنان شفیع
چندریگام ترال، جموں و کشمیر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے