یہ کائنات کیسے وجود میں آئی؟ (قسط 1)

آج کی تحریر بہت ہی، دلچسپ، اسپیشل اور حیران کن ہے۔ یہ کائنات کتنی بڑی اور خوبصورت و دلکش ہے۔ ہم سب کی آج کی تحریر پڑھنے کے بعد آپ حیران رہ جائیں گے۔ کائنات کی کہانی سمجھنے کے لئے بہت ضروری ہے کہ تحریر کو اینڈ تک پڑھیں۔ کیا ہے کائنات؟ کتنی بڑی اور کس قدر حسین و دلکش ہے یہ کائنات؟ کیسے وجود میں آئی یہ کائنات، ہم انسان کہاں رہتے ہیں؟ کائنات میں زندگی کا آغاز کب اور کیسے ہوا؟ وہ کہکشاں جہاں انسان بستے ہیں اس کا کیا نام ہے اور وہاں کتنے ستارے ہیں؟

ذرا دیکھیں اس کائنات کو غور سے اور سوچیں ہم انسان کیا ہیں اور ہماری اوقات اس کائنات میں کیا ہے؟ یہ جو منظر ہم انسانوں کو نظر آ رہا ہے اس میں لاکھوں نہیں، کروڑوں بھی نہیں، اربوں بھی نہیں بلکہ کھربوں بھی نہیں لامحدود ستارے اور سیارے ہیں۔ انسان جس galaxy یا کہکشاں کے ایک چھوٹے سے planet پر رہتے ہیں اس گیلکسی کا نام ملکی وے ہے۔ حیران کن بات یہ ہے کہ اس ملکی وے نامی galaxy میں بھی کروڑوں اربوں ستارے ہیں۔ یہ اربوں کھربوں ستارے مل کر ایک گیلکسی بناتے ہیں۔ ملکی وے وہ کہکشاں ہے جسے انسان کی کہکشاں کہا جاتا ہے۔ ملکی وے گیلکسی کی سرحدیں لامحدود ہیں۔ ملکی وے گیلکسی اس قدر حسین اور دلکش ہے کہ انسان دیکھ کر حیران رہ جائے۔

ملکی وے کے آس پاس ایسی کھربوں galaxies ہیں۔ ان سب galaxies کو یونیورس یعنی کائنات کہا جاتا ہے۔ دیکھیں یہ ہے کائنات جو اس قدر دلکش ہے کہ انسان اسے دیکھ کر جنت کو بھی بھول جائے۔ اس کائنات میں اربوں کھربوں gaalaxies ہیں۔ یہ یونیورس یا کائنات ایک بال کی طرح دکھائی دے رہی ہے۔ حیران کن بات یہ ہے کہ یونیورس بھی ایک نہیں لاکھوں کروڑوں کائناتیں اور ہیں جن کے بارے میں انسان ابھی تک جانتا ہی نہیں۔ یہ تمام لاکھوں کروڑوں کائناتیں آپس میں لنک ہیں۔

پھر یہ کروڑوں کائناتیں مل کر ایک ملٹی ورس بناتی ہیں۔ کیا معلوم یہ ملٹی ورس ایک نہیں بلکہ کروڑوں اربوں ہوں اور پھر ان ملٹی ورث سے بھی اوپر کوئی سپر ورث ہو۔ اسے کہتے ہیں کائنات۔ اتنی بڑی کائنات میں انسان کی کیا اوقات ہو سکتی ہے اس کا اندازہ ہم انسان خود ہی لگا سکتے ہیں۔ اس یونیورس، ملٹی ورس اور سپر ملٹی ورس میں انسان کی اوقات اگر ایک چیونٹی کی بھی ہو تو بڑی بات ہو گی۔ یہ کائنات کیسے بنی ہوگی؟ کیوں بنے ہوگی اور کس طرح بنی ہوگی؟ اتنی بڑی سپیس میں کیسے ناچ رہی ہے یہ دلکش کائنات۔

جاری۔۔۔۔۔۔

تحریر : اجمل شبیر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے