تحریر: عابدہ ابوالجیش کاغذ کی کشتی تھی پانی کا کنارہ تھا کھیلنے کی مستی تھی دل یہ آوارہ تھا جانے کہاں آگۓ سمجھداری کے اس […]